جنگی جرائم اپریل 2016

سید سعید                  

رواں  سال    4 اپریل  کو صوبہ  غزنی کے ضلع شلگر  کے   سینی  نامی  گاؤں میں کٹھ پتلی اہل کاروں نے  ایک   عام شہری  یوسف کو  گھر میں  گھس کر  شہید کر دیا۔ 5 اپریل  کو افغان اسلامی نیوز ایجنسی  نے   خبر  دی کہ خوست  کے علاقے  دمتون   کے یلگی  گاؤں میں کٹھ پتلی  کمانڈر مروت نے  ایک  گھر پر  چھاپے کے دوران دو  خواتین کو بے دردی سے شہید،  جب کہ  دو خواتین   سمیت ایک مرد کو زخمی  کیا۔ قاتل  مروت  کمانڈر خوست میں   ایک  خصوصی فورس کے  ظالم  کمانڈر کے  طور پر مشہور ہے۔یہ خصوصی فورس  امریکیوں نے  بنائی ہے اور ان  ہی کی  طرف سے  انہیں وسائل  مہیا کیے جاتے ہیں۔  خوست  کے  آئی جی پولیس فیض غیرت  نے  بھی مبینہ واقعے  کی تصدیق کی ہے۔

7 اپریل کو صوبہ  پکتیکا کے ضلع  گومل میں امریکی جارحیت پسندوں  کے  فضائی  حملے  میں  قبائلی  بزرگوں  سمیت 19 افراد شہید کر دیے گئے۔ مقامی  افراد کے  مطابق مذکورہ  افراد  تین  گاڑیوں میں سوار  تھے  اور  وہ  دو قبائل کی   باہمی  رنجش   کے  حل کے لیے جرگے  میں شرکت کرنے جا رہے تھے۔ اسی  دن صوبہ  ننگرہار کے ضلع پچیراگام میں پچیر مارکیٹ کے  قریب غیر ملکی جارحیت پسندوں نے  عام شہریوں کی  گاڑی پر ڈرون حملہ کیا، اس  حملے  کے  نتیجے میں  مولوی  عبدلسلام اور  پیر قمر الدین شہید، جب کہ  تین   افراد زخمی ہوئے۔

9  اپریل  صوبہ قندوز کے مرکز کے قریب کتہ خیل  میں کٹھ پتلی   اہل کاروں نے گھروں پر چھاپے کے دوران لوگوں  کی قیمتی اشیاء  چرانے کے ساتھ دس افراد کو گرفتار بھی کیا ۔

12 اپریل صوبہ لغمان کے ضلع مہتر لام کے علاقے  بسرام میں  کٹھ پتلی  فورسز کا مارٹر  گولہ  ایک سکول پرگرنے  سے دو  بچے  شہید، جب کہ  تین  بچے  زخمی ہوگئے۔ اسی دن  قندھار کے  ضلع خاکریز  کے  علاقے ساگی میں امریکی کاسہ لیس اسپیشل فورسز کے درندوں نے   چھاپے کے  دوران  ایک  امام مسجد کو  شہید،  جب کہ  بارہ افراد کو گرفتار کیا۔

13 اپریل کو قندوز کے ضلع امام صاحب  کے علاقے  قطر بلاک   میں  ملیشیا کے  اہل کاروں نے    سڑک پر ایک گاڑی کی  تلاشی  لی اور  جانے کی اجازت کے بعد  گاڑی   پر   پیچھے سے  فائرنگ کی، جس میں سوار دو  افراد موقع پر ہی شہید، جب کہ  دیگر چار افراد زخمی ہوگئے۔  اسی دن صوبہ  ہلمند    کےضلع  گریشک  کے  علاقے  حیدر آباد میں بھی   غیر ملکی جارحیت پسندوں نے  ملکی  کٹھ پتلیوں کی مدد سے  چھاپہ مار کر 16 افراد کو  گرفتار کیا۔

14   اپریل  کو صوبہ  زابل کے مرکز  قلات میں  سینک چیک پوسٹ کے  اہل کاروں نے  چیک پوسٹ کے قریب ایک  شخص عبدالغنی کو شہید کیا۔

16 اپریل  کو غیر ملکی  جارحیت پسندوں نے  داخلی کٹھ  پتلیوں کی  مددسے  نائٹ  آپریشن کے دوران صوبہ لوگر کے  ضلع خروار  کے  نواحی  علاقوں  پر چھاپے  کے دوران 10  افراد کو شہید،  جب کہ دو افراد کو  گرفتار کیا۔ عینی شاہدین کے مطابق غیر ملکی جارحیت پسندوں نے  ایک ہی خاندان کے سات افراد کو نیند سے  جگا کر  اور لائن میں کھڑاکر کے  گولی  مار  دی،    جس سے  اس خاندان کے  تمام افراد  شہید ہوگئے۔ اس کے علاوہ  گاؤں  میں  تین اور افراد مختلف  گھروں میں شہید کر دیے گئے۔ اسی دن صوبہ  فراہ  کے ضلع  بالا   بلوک  کے علاقے  گرانی میں ملیشیا کے  غنڈوں نے   اپنے کمانڈر کا بدلہ لینے کے لیے ایک  بارہ  سالہ  بچے  ناصر جان کو  شہید کیا۔

17  اپریل کو  غیر ملکی جارحیت پسندوں کے  نائٹ  آپریشن کے دوران  قندھار کے ضلع  شاہ ولی کوٹ کے علاقے  دویانی اور لنڈی کاریز میں لوگوں کے  گھروں پر  چھاپے کے دوران لوگوں کی املاک کو آگ لگا دی،  جب کہ دو افراد کو  گرفتار کر کے ساتھ لے گئے۔

20  اپریل  کو قندوز کے ضلع دشت ارچی  میں کٹھ  پتلی  اہل کاروں نے  عام  آبادی  کو بھاری  ہتھیاروں  سے  نشانہ بنایا،  جس  میں  دو خواتین  شہید، جب کہ   چھ خواتین اور  بچے  زخمی ہوئے۔اسی دن بدخشان کے  ضلع یمگان  کے مرکز  میں  کٹھ  پتلی فورسز نے  گاؤں   پر بمباری   کی  اس  حملے میں  چار  گھر تباہ  ہو گئے، جس میں  ایک خاتون اور دو  بچے  شہید،  جب کہ  دو  خواتین زخمی ہوئیں۔ اسی دن قندوز کے ضلع  چہار درہ  کے  علاقے  نہر صوفی میں  امریکی کاسہ لیسوں کے  ایک حملے  کے  نتیجے  میں  ایک شخص شہید،  جب کہ  ایک زخمی ہوگیا۔ اسی دن  صوبہ فاریاب کے ضلع گرزیوان  کے  علاقے  جر قلعہ  میں کٹھ پتلیوں کے مارٹر  حملے میں ایک دس سالہ  بچہ  شہید ہوگیا۔

21 اپریل  کو صوبہ خوست کے ضلع صبریو  کے  گاؤں  نور میں  کٹھ  پتلی اہل کاروں  نے  رات کو چھاپے کے  دوران ایک   ہی خاندان کے    تین افراد کو شہید،  جب کہ  ایک   بچی کو زخمی کیا۔ جب کہ  علاقے سے   آٹھ  افراد کو  گرفتار  بھی کیا گیا۔ عینی  شاہدین  نے   میڈیا کو  بتایا کہ  فورسز نے  ان کے گھروں کی  تلاشی لی۔ ان پر تشدد کیا۔ جب کہ گاؤں کے  تین افراد کو شہید  بھی کیا۔ ضلع صبری کے  گورنر  آغاجان نے  بھی  اپنے  اہل کاروں کے  اس جرم کا اعتراف کیا ہے۔

22 اپریل کو  صوبہ جوزجان کے ضلع مردیان  میں   دوستم  کے جنگجوؤں نے لوگوں گھروں  کی تلاشی کے دوران قیمتی  اشیاء لوٹی ہیں۔ لوگوں پر  تشدد کیا اور  تشدد کے دوران   دو  بچوں کے  ہاتھ  بھی توڑ  ڈالے،  جب کہ  پانچ افراد کو گرفتار  بھی کیا  گیا۔

24 اپریل  کو   صوبہ  پکتیا کے ضلع سید کرم میں ملیشیا کے  اہل کاروں نے  مسک کاریز کے  ایک اسکول  ٹیچر خیالی  مرجان کو شہید کیا۔

29 اپریل کو غزنی کے ضلع  گیلان  کے ضابط نامی  گاؤں میں ملیشا  کےخونخواروں نے  ایک ساٹھ سالہ  بزرگ  محب اللہ کو  بڑی بے  دردی  سے  شہید کر ڈالا۔

30   اپریل   کو صوبہ  ہلمند کے   حکومتی ترجمان عمر زواک نے میڈیاکو  بتایا کہ  ہلمند کے شمالی  علاقے میں ان کی  فورسز کے  ایک مارٹر   گولے کی زد میں  آکر تین  بچے  شہید ہوئے  ہیں۔

 

اقتباسات: بی بی سی،آزادی ریڈیو،افغان اسلامک نیوز ایجنسی، پژواک،خبریال،لراوبر،نن ٹکی ایشیا۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*