ملک بھر میں 41 اضلاع کے مراکز پر مجاہدین قابض ہیں

ملک بھر میں اکثر ضلعی مراکز اور وسیع علاقے صوبائی دارالحکومتوں کےعلاوہ  امارت اسلامیہ کے مجاہدین کے قبضے میں ہیں۔ دشمن بعض اضلاع کے صرف مراکز تک محدود اور محصور ہے،اس کے علاوہ تمام وسیع و عریض علاقے مجاہدین کے کنٹرول میں ہیں، مگر درج ذیل رپورٹ میں ہم صرف ان اضلاع کا تذکرہ کرتے ہیں، جو مرکز سمیت مجاہدین کے قبضے میں ہیں۔

اسی طرح ملکی سطح پر 41 اضلاع مراکز اور مربوطہ علاقوں سمیت مجاہدین کے قبضے میں ہیں اور حتی الامکان تمام انتظامی امور مجاہدین ہی چلارہے ہیں۔ تفصیل درج ذیل ہیں۔

صوبہ ہلمند میں سات اضلاع ( باغران، بغنی، موسی قلعہ، نوزاد، دیشو، ناوہ اور خانشین )

صوبہ ہلمند پکتیکا میں  پانچ اضلاع ( نکہ، گیان، چاربران، ڈیلہ اور اومنہ )

صوبہ غزنی میں  چار اضلاع ( ناوہ، خوگیانی، رشیدان اور زنہ خان )

صوبہ فراہ میں چار اضلاع ( گلستان، بکوا، بالابلوک اور خاک سفید)

صوبہ سرپل میں  چار اضلاع ( کوہستانات، شیرم، الفتح اور البدر )

صوبہ قندہار میں تین اضلاع  ( غورک، ریگستان اور میانشین )

صوبہ بدخشان میں دو اضلاع ( یمگان اور  وردوج )

صوبہ زابل میں دو اضلاع ( نوبہار اور خا ک افغان )

صوبہ فاریاب میں دو اضلاع  ( خواجہ ناموسی اور خیبر)

صوبہ بغلان میں  ایک ضلع ( دہنہ غوری)

صوبہ نورستان میں ایک ضلع ( منڈول )

صوبہ خوست میں ایک ضلع (قلندر)

صوبہ بلخ میں ایک ضلع ( البرز)

صوبہ پکتیا میں ایک ضلع ( ارمہ)

صوبہ روزگان میں ایک ضلع ( خارخوردہ)

صوبہ لوگر میں ایک ضلع ( خروار)

اور رصوبہ غور میں ایک ضلع ( مرغاب ) پر امارت اسلامیہ کے مجاہدین قابض ہیں۔

دیگر صوبوں میں متعدد اضلاع کے وسیع رقبے پر مجاہدین کا قبضہ ہے، لیکن مراکز کابل انتظامیہ کے پاس ہے۔

ذبیح اللہ مجاہد ترجمان امارت اسلامیہ

04/ ربیع الاول 1438 ھ بمطابق  03 / جنوری 2017 ء

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*