رمضان المبارک کا مقدس غزوہ

آج کی بات:

گزشتہ روز صوبہ ننگرہار کے ضلع اچین میں افغان نیشل آرمی میں شامل ایک بااحساس اہل کار نے تاریخ رقم کرتے ہوئے ہمراہ امریکی فوجیوں پر اندھا دھند فائرنگ کر دی، جس کے نتیجے میں چار امریکی فوجی موقع پر ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے۔ مذکورہ اہل کار جوابی کارروائی میں خود بھی جام شہادت نوش کر گئے۔ اطلاعات کے مطابق یہ واقعہ ننگرہار کے ضلع اچین کے "درہ پیشی” نامی علاقے کے مقام "لتا بند” میں اس وقت پیش آیا، جب دسیوں امریکی فوجی داخلی فوجیوں کی مدد کرنے کے لیے آئے تھے۔ وہ مذکورہ علاقے میں کٹھ پتلی فوج کے محصور اہل کاروں کو مجاہدین کے گھیرے سے باحفاظت نکالنے میں مدد فراہم کرنا چاہ ریے تھے۔

امارت اسلامیہ کے ترجمان کے مطابق افغان فورسز میں شامل ایک اہل کار مجاہدین کے ساتھ رابطے میں تھا۔ رمضان المبارک کے پندرھویں روز غازی اہل کار نے اللہ اکبر کے نعرے کے ساتھ ہی امریکی فوجیوں پر فائرنگ کر دی، جس کے نتیجے میں چار امریکی فوجی موقع پر ہلاک اور دیگر کئی زخمی ہو گئے۔ اس کے بعد امریکی اور اجرتی فوجیوں کی طرف سے مذکورہ مجاہد اہل کار کو بے حد وحشیانہ طریقے سے شہید کر دیا گیا۔

امریکی وحشی فوجیوں کو افغانستان میں ایسے وقت میں جانی اور مالی بھاری نقصان پہنچا ہے، جب پینٹاگون میں امریکی جرنیل گہری سوچ میں دوبے ہوئے تھے کہ آئندہ افغان اجرتی فورسز کو امریکی فوجیوں کے لیے ڈھال کے طور پر استعمال کیا جائے گا۔ جس کے نتیجے میں امریکی فوجیوں کو مجاہدین کی جانب سے کوئی نقصان نہیں پہنچ سکے گا، لیکن ایک اہل کار کی جانب سے امریکی فوجیوں پر حملے نے پینٹاگون اور وائٹ ہاؤس میں موجود امریکی حکمرانوں کو اپنی سوچ سے بہت مایوس اور خوف زدہ کر دیا ہے۔ اس حملے سے انہیں شدید دھچکا پہنچا ہے۔ اہل کار نے ان کے تمام اقدامات اور منصوبوں کو غلط ثابت کر کے ناکامی سے دوچار کر دیا ہے۔ ان کا خیال تھا کہ جدید ہتھیاروں سے لیس امریکی فوجیوں کو اب افغانستان میں کوئی نقصان نہیں پہنچا سکے گا۔ اب کے امریکا ہلاکتوں کے نقصان سے محفوظ رہے گا۔

امارت اسلامیہ کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہدین نے میڈیا کو جاری کردہ ایک خبر میں لکھا ہے کہ: مجاہدین ایسے جہادی منصوبوں پر غور کر رہے ہیں کہ اللہ کے فضل و کرم سے نئی حکمت عملی کے تحت امریکی فوجیوں کو افغان فورسز میں بھرتی ہونے والے اہل کاروں کی جانب سے بھی نشانہ بنایا جائے گا۔ ان کے محفوظ ٹھکانوں اور فوجی اڈوں میں بھی ہلاکت خیز حملے اور بم دھماکے کیے جائیں گے۔ انہیں کسی صورت چین سے نہین رہنے دیا جائے گا۔

ان شاء اللہ تعالی

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*