امریکی غاصبوں کی جانب سے کلمہ طیبہ کی توہین کے بابت امارت اسلامیہ کا اعلامیہ

امریکی غاصب فوجوں نے خاص منصوبے اور اسلام سے اپنی نفرت کے اظہار کی خاطر صوبہ پروان میں طیاروں سے ایسی پمفلٹ گرادی، جس  میں کتے کی تصویر پر کلمہ طیبہ چسپاں کی گئی تھی  اور بعد میں اسے طالبان کی شکل میں زیر ہدف بتلایا گیا،تاکہ اسلام، قرآن اور کلمہ سے اپنی دشمنی واضح  اور یہ اظہار کریں، کہ مذکورہ چیزیں ان کے ٹارگٹ  میں ہیں۔

افغان مسلمان عوام ماضی میں بخوبی اس بات سے آگاہ تھے کہ امریکی غاصبوں نے ہمارے ملک پر اسلیے قبضہ کر رکھا ہے کہ یہاں اسلامی نظام اور قرآن کریم کے حاکمیت کا روک تھام کریں  اور مسلمانوں سے اپنی ازلی نفرت کو ظاہر کریں۔

مگر اس کے خلاف افغان غیور اور مسلمان عوام اپنے عقائد، اسلام ، کلمہ اور ملک سے  دفاع کو اپنی ذمہ داری سمجھتی ہے۔

اسی وجہ سے ملک میں  گزشتہ 16 برس سے امریکی غاصبوں کے خلاف مقدس جہاد  جاری ہے اور امارت اسلامیہ کے مجاہدین اپنی عوام کی نمائندگی کرتے ہوئے اپنے دین، کلمہ اور اسلامی اقدار سے سر کی قیمت میں دفاع کررہی ہے۔

وہ مرتزقہ غلام جو غفلت یا جہالت کی وجہ سے  چند ڈالر کی عوض امریکی جارحیت کی خدمت میں مصروف عمل ہیں، ممکن اب سمجھ چکے ہونگے کہ یہ جنگ اسلام اور کفر یا حق و باطل کے مابین لڑائی ہے۔

اس جنگ میں مجاہدین برحق مزاحمت کار ہیں اور  اس کے برعکس امریکی غاصب اور ان کی خدمت میں مزدور غلام اسلام اور کلمہ کے خلاف کھڑے شیطان کے پیروکار ہیں۔

ملت کو چاہیے کہ امارت اسلامیہ کے مجاہدین کا مزید تعاون  و حمایت کریں، جس طرح کیمونزم کے شر سے اپنے عقیدے اور دین کو نجات دی، اسی طرح امریکی کفری جارحیت سے بھی اپنے کلمے اور دین کو نجات دیں۔

اب حق و باطل کے درمیان لکیر مزید روشن اور واضح ہوئی،  اگر پھر بھی بعض بھٹکے ہوئے افراد کافروں کی حمایت میں اپنے عقیدے اور دین سے دشمنی کے عمل میں تعاون کررہا ہے، ان کے پاس کو عذر نہیں ہے، ان کا قتل واجب  اور روز قیامت انہی کافروں کی صف میں ہوگا۔

امارت اسلامیہ افغانستان

15/ ذی الحجہ 1438 ھ بمطابق   06 / ستمبر 2017 ء

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*