سات سو امریکی کمانڈوز کے آمد کے متعلق ترجمان کا ردعمل

جمعہ کے روز 12/جنوری 2018ء امریکی استعمار کے فوجی حکام سٹارز اینڈ سٹرائپس نے امریکی فوجی روزنامہ سے کہا کہ  کٹھ پتلی انتظامیہ کی فوجوں کی تربیت کی خاطر تقریبا سات سو مزید جارح امریکی فوجوں اور آفسروں کو افغانستان روانہ کیے جائینگے۔اس بارے میں امارت اسلامیہ کے ترجمان جناب ذبیح اللہ مجاہدین نے شدید ردعمل کا اظہار  کیا۔ انہوں نے امریکی صدر ٹرمپ کو للکارا، کہ گذشتہ 16 برسوں کے دوران  استعماروں کے قبرستان (افغانستان) میں اپنی مسلسل شکستوں سے درس عبرت حاصل کرلے، یہاں سینکڑوں رابط مجاہدین اور فدائی سربکف تمہاری افواج کو قتل کرنیکی خاطر منتظر ہیں اور یہ مزید بےمعنی اور صرف پروپیگنڈے  سے وقت ضائع کرنے کے علاوہ اور کوئی فائدہ نہیں رکھتی۔

امارت اسلامیہ کے ترجمان نے ردعمل میں کہا کہ ” امریکی استعمار  ایک لاکھ سپاہ سے جنگ نہ جیت سکی، تو سات سو کمانڈوز بھیجنے کا تماشہ ایک پروپیگنڈہ ہے، کیونکہ امریکہ اور اس کے حواری اب مجبور ہیں، وقتا فوقتا اپنی حواس باختہ فوجیوں کی حوصلہ افزائی کرتے رہتے ہیں”۔

ہمارے سینکڑوں رابط مجاہدین اس لمحے کی بےصبری سے انتظار کررہا ہے،جب انہیں امریکی فوجوں سے سامنا ہوجائے اور اپنی بندوقوں کا رخ کی جانب کریں۔

ہم امریکی صدر ٹرمپ کو یاد دلاتے ہیں کہ افغانستان میں اپنی سولہ سالہ شکست اور ناکامی سے عبرت حاصل کرو، استعمار کے قبرستان میں  مزید اپنی مذموم قسمت آزمائی سے اجتناب کرو۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*