امریکی وزارت خارجہ کے حالیہ بیان کے متعلق امارت اسلامیہ کے سیاسی دفتر کا اعلامیہ

جنوبی اور مرکزی ایشیا کے امور امریکی وزارت خارجہ کی نائبہ الیس ویلیز نے حالیہ دنوں میں اپنے بیان میں کہا کہ امریکہ نے طالبان کے لیے مذاکرات کے دروازے کھلے رکھے ہیں، تو اس بارے میں امارت اسلامیہ افغانستان کا سیاسی دفتر اپنے مؤقف کو درج ذیل الفاظ میں بیان کرتا ہے:

امریکی حکام کو امارت اسلامیہ کاسیاسی دفتر بتاتی ہے کہ افغان مسئلے کے پرامن حل کے لیے امارت اسلامیہ کے سیاسی دفتر سے  براہ راست گفتگو کے لیے رابطہ کریں۔

مسئلے کے حل کے لیے بہتر یہ ہے کہ امریکی پہلو افغان عوام کے جائز  مطالبات کو تسلیم کریں اور اپنی رائے اور  مطالبات پرامن طریقے کے ذریعے امارت اسلامیہ سے بحث کے لیے پیش کریں۔

امارت اسلامیہ نے چند روز قبل بھی امریکی عوام اور اراکین کانگریس کو کھلے خط میں واضح کردیا کہ جنگ ہمارا انتخاب نہیں ہے، بلکہ ہم پر مسلط کی گئی ہے۔

ہم جارحیت کے خاتمے کے لیے  افغان تنازعے کا پرامن حل چاہتے ہیں۔

اب امریکہ اور اس کے متحدین کو ثابت ہوا ہے ،کہ افغان تنازعہ کا فوجی حل نہیں ہے۔ امریکہ مزید افغانستان میں جنگ کے بجائے صلح کی پالیسی پر توجہ دیں۔ استعمال شدہ فوجی مشن گذشتہ سترہ سالوں میں بار بار تجربہ ہوچکا ہے،جو جنگ میں صرف تیزی اور طول لاتی ہے، جو کسی کے مفاد میں نہیں ہے۔

امارت اسلامیہ افغانستان

10/ جمادی الثانی 1439 ھ  بمطابق  26/ فروری 2018 ء

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*