انفاق فی سبیل الله کا ایک منفرد موقع

آج کی بات

 

یہ حقیقت ہے کہ بالخصوص مسلم دنیا میں مال و دولت سے مالا مال بہت سے صاحب خیر حضرات موجود ہیں، جو صحیح طریقے سے اور صحیح موقع پر انسانی اور اسلامی ہمدردی کی بنیاد پر اپنی دولت سے صدقہ کرنا چاہتے ہیں۔ ان کی ایک بڑی خواہش یہ ہوتی ہے کہ ان کے صدقات اور مالی امداد قابل اعتماد لوگوں کے ذریعے حقیقی مستحق افراد تک پہنچ جائے۔ یہ بھی حقیقت ہے کہ دنیا میں غربت اور مصیبت زدہ لوگوں کی اکثریت اسلامی دنیا میں ہے، جس کی ایک مثال افغانستان ہے۔ یہ چالیس سال سے جارحیت پسندوں کی مسلط کردہ جنگ اور مظالم کی آگ میں جل رہا ہے۔ جس کے باعث لوگ لاکھوں یتیم، بیوہ، معذور اور مریض بن چکے ہیں۔ ان افراد کا اللہ کے بغیر دنیا میں کوئی آسرا نہیں ہے۔ ایسے لوگ صاحب خیر حضرات کی امداد کے منتظر رہتے ہیں۔

اس صورت حال میں اس شخص کی ذمہ داری مزید بھاری ہو جاتی ہے، جس کو اللہ تعالی نے اپنے فضل سے دولت دی ہے۔ کیوں کہ غریب اور بے بس یتیموں کو اللہ تعالی نے صاحب دولت لوگوں کے لیے ایک امتحان بنایا ہے کہ وہ غریبوں اور یتیموں کی مالی معاونت کرتے ہیں یا نہیں؟ اگر انہوں نے یتیموں کی مالی معاونت کی تو وہ امتحان میں کامیاب ہوئے۔ اللہ تعالی انہیں بہترین بدلہ عطا کرے گا:

‘وَمَا تُنْفِقُوا مِنْ خَيْرٍ يُوَفَّ إِلَيْكُمْ وَأَنْتُمْ لَا تُظْلَمُونَ’ (البقرة: 272)

اور جو کچھ تم مال خیر سے صدقہ کرو گے، اس کا پورا بدلہ دیا جائے گا۔ حدیث قدسی کا مفہوم بھی ایسا ہے:

‘یاعبدي، أنفِقْ اُنفِقَ علَیکَ’

اے میرے بندہ تم خرچ کرو، تم پر خرچ کیا جائے گا۔

اسی وجہ سے امارت اسلامیہ کے مجاہدین جارحیت پسندوں کے ظالمانہ قبضے کے خلاف مسلح جہاد کرنے کے ساتھ یہ کوشش بھی کرتے ہیں کہ افغانستان اور بیرونی دنیا میں تمام دولت مند مسلمان بھائیوں کے اخلاص اور تعاون سے غریبوں، یتیموں، بیواؤں اور معذور افراد کی مدد کریں۔ اس وجہ سے امارت اسلامیہ نے یتیموں اور معذوروں کے لیے ایک مستقل ادارہ تشکیل دیا ہے۔ تاکہ صاحب خیر حضرات کے صدقات مکمل دیانت داری اور شفاف طریقے سے مستحقین تک پہنچائے جا سکیں۔

بلا شبہ انفاق فی سبیل اللہ کا سب سے بہترین اور منفرد موقع بھی یہی ہے کہ امیر لوگ صحیح طریقے سے حقیقی مظلوم اور لاچار لوگوں تک مالی انتظام کے ایک ذمہ دار ادارے کے ذریعے امداد میں حصہ لیں۔ یتیموں اور معذوروں کے لیے مذکورہ ادارے نے اپنے پیغام میں دولت مندوں سے امداد کی اپیل کی ہے۔ ان کو یقین دہانی کرائی ہے کہ دیانت داری کے ساتھ ان کے صدقات مستحق لوگوں تک پہنچائے جائیں گے۔

افغانستان کے تمام علاقوں، خاص طور پر امارت اسلامیہ کے زیرکنٹرول علاقوں میں حملہ آوروں کے وحشیانہ حملوں کی وجہ سے ایسے غریب خاندانوں، یتیموں اور معذور افراد کی اکثریت پائی جاتی ہے، جن کی آمدن کا کوئی ذریعہ نہیں ہے۔ جن کی زندگی کے شب وروز انتہائی غربت، بے بسی اور بیماری میں گزر رہے ہیں۔

ان کی تمام امیدیں اور توقعات صرف اور صرف مسلمانوں کے مالی تعاون سے وابستہ ہیں۔ یاد رکھیں آپ کا معمولی تعاون کسی یتیم کے ہونٹوں پر مسکراہٹ لا سکتا ہے۔ اس سلسلے میں یتیموں اور معذوروں کا ادارہ مسلمانوں کو مکمل یقین دلاتا ہے کہ آپ کے ہر قسم کے تعاون، نقد رقم اور دیگر امداد امارت اسلامیہ کے دستور کے مطابق بروقت اور صحیح طریقے سے مستحقین تک پہنچائی جائے گی۔ آپ درج ذیل پتے پر رابطہ کرسکتے ہیں۔

ای میل ایڈریس: [email protected]

وٹس ایپ نمبر: 0093708766139

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*