آپریشن الخندق کی پیش رفت

آج کی بات

 

آپریشن الخندق کے سلسلے میں ملک بھر میں حملہ آوروں اور کٹھ پتلی فورسز کو بھاری جانی اور مالی نقصانات کا سامنا ہے۔ فوجی اڈے اور چوکیاں ان کے کنٹرول سے نکل رہی ہیں۔ مفتوحہ علاقوں میں مجاہدین نے بھاری مقدار میں اسلحہ اور فوجی سازوسامان غنیمت میں حاصل کیا ہے۔ امارت اسلامیہ کے زیرکنٹرول علاقوں کا دائرہ مزید وسیع ہوا ہے۔ دشمن نے سول آبادی پر چھاپوں اور فضائی حملوں کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔ جس کے نتیجے میں شہریوں کو بڑے پیمانے پر جانی اور مالی نقصان ہوا ہے۔ تاہم وہ امارت کے زیرکنٹرول علاقوں کی طرف ایک انچ بھی پیش رفت نہیں کر سکا۔اس کے  برعکس مجاہدین نے دشمن کے خلاف گوریلا اور جارحانہ حملوں کا سلسلہ تیز کر دیا ہے۔ ملک بھر میں دشمن کو شکست کا سامنا ہے۔

دشمن سیاسی کمزوری اور مسلسل فوجی شکست کے ساتھ ذہنی لحاظ سے بھی بوکھلاہٹ کا شکار ہے۔ ایک جانب ہر روز مجاہدین کے حملوں میں دشمن کو بھاری جانی اور مالی نقصان ہو رہا ہے تو دوسری جانب جوق در جوق فوجی اور پولیس اہل کار ہتھیار پھینک کر امارت کے دھارے میں شامل ہو رہے ہیں۔ وہ قابض دشمن اور کابل انتظامیہ کے ساتھ کام کرنے پر پچھتاوے کا اظہار کرتے ہیں۔ آئندہ کے لیے اس عزم کا اظہار کرتے ہیں کہ دین اور وطن کے دشمنوں کے ساتھ پھر کبھی کام نہیں کریں گے۔ وہ مجاہدین کے ساتھ ہر قسم کے تعاون کے لیے تیار ہیں۔ امارت اسلامیہ نے ہتھیار ڈالنے والے اہل کاروں کا خیرمقدم کیا ہے۔ ان کے اعزاز میں پروقار تقریبات کا انعقاد کیا ہے۔ انہیں انعام سے نوازا گیا اور یقین دلایا کہ ان کی جان، مال اور عزت کا تحفظ مجاہدین ہر قیمت پر کریں گے۔

آپریشن الخندق کے تحت مجاہدین کی کامیاب کارروائیوں کے نتیجے میں دشمن کی صفوں میں بداعتمادی کی فضا قائم ہے۔ حال ہی میں ہلاکت خیز اور کامیاب کاروائیوں نے جارحیت پسندوں اور کابل انتظامیہ کے آپریشنل کوآرڈینیشن کو روک دیا ہے۔ جب کہ کابل انتظامیہ کے درمیان اختلافات اتنے وسیع ہیں کہ ایک دوسرے کو مات دینے کے لیے دن رات مصروف ہیں۔ ہمیں یقین ہے الخندق آپریشن کی کامیاب کارروائیوں کے نتیجے میں دشمن مزید بھی سیاسی، فوجی اور اعصابی لحاظ سے کمزور ہوگا۔ اس کے باہمی اختلافات مزید بڑھیں گے۔ امارت اسلامیہ کی قیادت میں عوامی مزاحمت کا راستہ روکنے کا سلسلہ مزید جاری نہیں رہ سکے گا۔

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*